ویڑیو

ای پیپر

اہم خبریں

سرینگر /20مئی / این این این
جموں کے رام بن علاقے میں زیر تعمیر ٹنل ڈھہ جانے.

سرینگر /20مئی / این این این سرحدی قصبہ اوڑی میں پولیس نے ایک ولیج لیول ورکر.

سرینگر /20مئی / این این این
جموں اور کشمیر کے بیشتر حصوں میں بارشوں کے بعد.

 گزشتہ پانچ برسوں میں جموں کشمیر اور لداخ میں بادل پھٹنے کے واقعات میں اضافہ

   72 Views   |      |   Friday, May, 20, 2022

اس عرصے میں 18سے زائد واقعات آئے پیش 32کے قریب افراد اب تک لقمہ اجل بنے
سرینگر/27ستمبر/سی این آئی// جموں کشمیر اور لداخ میں گزشتہ5 برسوں کے دوران بادل پھٹنے کے 18سے زائد واقعات رونماء ہوئے ہیں جن میں اب تک 32افراد ہلاک اور پچاس کے قریب افراد زخمی ہوئے ہیں جبکہ ان واقعات میں 200سے زائد مویشی بھی ہلاک ہوئے ہیں اس کے علاوہ 250کے قریب رہائشی مکانات اور دیگر ڈھانچوں کو نقصان پہنچنے کی اطلاع ہے ۔ کرنٹ نیوز آف انڈیا کے مطابق گزشتہ پانچ سالوں میں جموں وکشمیر اور لداخ میں جون، جولائی اور اگست کے دوران بادل پھٹنے کے کم از کم 18 واقعات رونما ہوئے ہیں۔ عہدیداروں نے بتایا کہ تین ماہ جون، جولائی اور اگست میں جموں و کشمیر میں بادل پھٹنے کا خطرہ رہتا ہے۔ محکمہ موسمیات کی جانب سے مرتب کردہ ایک سرکاری دستاویز کے مطابق 2017 سے 2021 تک جون، جولائی اور اگست کے مہینوں میں بادل پھٹنے سے سیلابی صورتحال کی وجہ سے 18 افراد ہلاک اور آٹھ زخمی ہوئے۔ اعداد و شمار میں بتایا گیا ہے کہ واقعات کے دوران تقریباً 100 بکریاں اور بھیڑیں بھی ہلاک ہوئیں۔ 18 جولائی 2017 کو ، ضلع پلوامہ کے ترال کے علاقے ناگبل میں بادل پھٹنے کے بعد درجنوں مکانات کو نقصان پہنچا اور فصلیں ، سڑکیں ، درخت سیلاب سے بہہ گئے۔ 20 جولائی 2017 کو ڈوڈہ ضلع کے چھٹ قصبے میں بادل پھٹنے سے ایک ہی خاندان کے 6 افراد اور 11 دیگر زخمی ہوئے۔ اس کے علاوہ چھ مکان ، دو دکانیں اور ایک سکول بھی تباہ ہو گیا۔اعداد و شمار کے مطابق، 3 جولائی 2018 کو بادل پھٹنے کی وجہ سے، ضلع اسمبلی کے ترال نیرسٹن اور گاترو دیہات میں ایک گھر اور کئی ہیکٹر دھان میں پانی بھر گیا۔ 24 جولائی، 2018 کو بادل پھٹنے سے ناگناد ینگوانی گاؤں جو کہ اریپال ترال پلوامہ ضلع میں پڑتا ہے سیلاب نے یہاں پہ چند گھروں، دھان کے کھیتوں اور باغات کو نقصان پہنچایا۔ سیلابی صورتحال کا ایک اور واقعہ ضلع شوپیان کے سیدو، ہرپورہ اور ڈاچو گاؤں میں سیلاب کی وجہ سے کئی مکانات منہدم ہوگئے۔ اور اسی تاریخ کو بادل پھٹنے کی وجہ سے موسلا دھار بارش نے ضلع گاندربل کے کنگن علاقے کے کئی ندی نالوں میں سیلاب آیا، جس سے فصلوں، آبپاشی کی نہروں، دھان کے کھیتوں، پانی کے پائپوں اور کچھ رہائشی مکانات کو نقصان پہنچا۔ 9 اگست 2018 کو لیہہ ضلع کے کئی دیہاتوں میں بادل پھٹنے سے صابو، شی، سٹاکمو، چِلنگ اور رمبک گاؤں میں کئی گھروں اور دیگر املاک کو نقصان پہنچا۔اعداد و شمار کے مطابق، 14 اگست 2018 کو، بڑے پیمانے پر بادل پھٹ گیا اور آئے ہوئے سیلاب نے ضلع کپواڑہ کے تنگدھر علاقے میں تباہی مچا دی جس میں قصبہ، ناچیا، بگبالا، حاجی نارد اور گمول شامل ہیں جس سے مارکیٹ، درجنوں گھروں اور دکانوں کو نقصان پہنچا۔ سڑکیں، بجلی اور ٹیلی فون کا بنیادی ڈھانچہ تباہ ہوا اور اس سیلاب میں دو افراد ہلاک بھی ہوئے۔ 12 جون 2019 کو، ضلع بانڈی پورہ کے نائیڈ کھی-پوشوری گاؤں میں بادل پھٹنے سے چار افراد زخمی ہوئے۔ 27 جولائی 2019 کو، ضلع پلوامہ کے ترال کے علاقے بریڈیانگن کے علاقے میں بادل پھٹنے سے تقریباً 100 بھیڑیں اور بکریاں مرگئیں۔3 اگست 2019 کو بادل پھٹنے سے ضلع پلوامہ کے ترال سب ڈویڑن کے حاجن علاقے میں ایک رہائشی مکان ، ایک اسکول اور ایک سڑک کو نقصان پہنچا۔ پانی کی فراہمی اور بجلی کی ترسیل کی لائنوں کو بھی جزوی نقصان پہنچا۔ 9 اگست 2020 کو، بارش اور آسمانی بجلی کے درمیان، پلوامہ ضلع کے جنگلاتی علاقے برین پاتھری ترال میں بادل پھٹ گیا، جس کی وجہ سے نشیبی علاقے میں سیلاب آیا۔ واقعے میں ایک شخص جاں بحق اور چار زخمی ہوئے۔ اعداد و شمار کے مطابق 3 جون 2021 کو ایک بڑا بادل پھٹنے سے شام کو ضلع کپواڑہ کے ہندواڑہ میں ترتھ پورہ کے گاؤں شرکوٹ میں ایک منظور احمد بھٹ ولد محمد صادق بھٹ کے گھر کے قریب واقع ایک سائٹ سے ٹکرا گیا۔ بادل پھٹنے سے بھٹ کے گھر کے علاوہ آس پاس کے دیگر گھروں کو بھی نقصان پہنچا۔12 جولائی 2021 کو ضلع گاندربل کی تحصیل لار کے بالائی علاقوں میں بادل پھٹ گیا ، جس کی وجہ سے نالوں اور ندی نالوں میں پانی کی ایک بڑی مقدار نیچے کی طرف بہہ گئی۔ سیلاب کے نتیجے میں زراعت کے کھیتوں، درختوں، سڑکوں، نالوں اور آبپاشی کی سہولیات کو نقصان پہنچا۔ 28 جولائی 2021 کو کم از کم نو افراد ہلاک ہوئے، 19 ابھی تک لاپتہ ہیں جبکہ 17 افراد زخمی ہوئے۔ 20 رہائشی مکانات اور مویشیوں کے شیڈ کے علاوہ دیگر بنیادی ڈھانچے کو دو سو کنال اراضی پر پھیلا ہوا دکنی علاقہ پوری طرح سے تباہ ہوگیا۔ اسی تاریخ کو بادل پھٹنے ایک اور واقع سامنے آیا جس سے اننت ناگ ضلع میں امرناتھ شرائن کے قریب پتھر گرنے سے وہاں موجود کچھ خیموں کو نقصان پہنچا۔ اسی تاریخ کو، ضلع بانڈی پورہ کے الوسا گاؤں میں بادل پھٹنے سے سیلاب آیا جس کے نتیجے میں ایک مکان ، مسجد اور فٹ برج کو جزوی نقصان پہنچا۔

متعلقہ خبریں

سرینگر /20مئی / این این این
جموں کے رام بن علاقے میں زیر تعمیر ٹنل ڈھہ جانے کے بعد 10افراد ٹنل کے اندر پھنسے ہیں.

سرینگر /20مئی / این این این سرحدی قصبہ اوڑی میں پولیس نے ایک ولیج لیول ورکر ( وی ال ڈبیلو ) کو 10.4کلو گرام ہیرون سمیت.

سرینگر /20مئی / این این این
جموں اور کشمیر کے بیشتر حصوں میں بارشوں کے بعد موسم خوشگوار ہو گیا ، ادھر محکمہ موسمیات.

  سرینگر /20مئی / این این این سرحد ی ضلع پونچھ میں آسمانی بجلی گر نے سے ایک شہری کی موت ہوئی ہے
این این این کو.

سرینگر //19مئی // این این این بڈگام پولیس نے معدنیات کی غیر قانونی کھدائی اور نقل و حمل کے الزام میں 01 شخص کو گرفتار.