ویڑیو

ای پیپر

اہم خبریں

جموں کے بکرم چوک میں ایک المناک حادثے میں گاڑی دریا تیوی میں گر گئی جس کے.

پولیس نے دعویٰ کیا ہے کہ سادھنا ٹاپ پر خاتون سمیت تین افراد سات کلو نارکوٹکس.

گاندربل میں نوجوان کو مردہ پایا گیا وسطی ضلعع گاندربل کے گاڈوہ کھیتوں میں.

بھارت اور چین کے درمیان تعلقات خراب مرحلے سے گزررہے ہیں

   100 Views   |      |   Sunday, May, 29, 2022

اسرائیل ’’میک ان انڈیا‘‘کے اقدامات کا اٹوٹ حصہ، دونوں ممالک کے تعلقات مضبوط سے مضبوط تر

چین نے معاہدوں کی خلاف ورزی کرتے ہوئے کچھ سرگرمیاں انجام دیں/جے شنکر
سرینگر/19نومبر// بھارتی وزیر خارجہ ایس جے شنکر نے کہا ہے کہ چین نے لداخ میں معاہدوں کی خلاف ورزی کرتے ہوئے ایسی سرگرمیاں انجام دیں ہیں جن پر بھارت کو اعتراض ہے ۔ انہوں نے کہاکہ اس وقت بھارت اور چین کے درمیان تعلقات خراب دور سے گزررہے ہیں ۔ بھارت کے وزیر خارجہ ایس۔ جے شنکر نے جمعہ کو کہا کہ بھارت اور چین اپنے تعلقات کے حوالے سے “خراب مرحلے” سے گزر رہے ہیں کیونکہ بیجنگ نے معاہدوں کی خلاف ورزی کرتے ہوئے کچھ سرگرمیوں کا ارتکاب کیا ہے جس کے لئے اس کے پاس ابھی تک “قابل اعتماد وضاحت” نہیں ہے۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ چین کی قیادت کو جواب دینا چاہیے کہ وہ دو طرفہ تعلقات کو کہاں لے جانا چاہتے ہیں۔سنگاپور میں بلومبرگ نیو اکنامک فورم میں “بڑے پیمانے پر طاقت کا مقابلہ: ایک ابھرتا ہوا ورلڈ آرڈر” پر ایک سمپوزیم میں ایک سوال کا جواب دیتے ہوئے جے شنکر نے کہا کہ “مجھے نہیں لگتا کہ چین کو اس بارے میں کوئی شک ہے کہ آیا ہمارے تعلقات متاثر ہوئے ہیں، ہم کس مقام پر کھڑے ہیں اور کیا گڑبڑی ہوئی ہے۔ میں نے اپنے ہم منصب وانگ یی سے کئی بار ملاقات کی ہے۔ جیسا کہ آپ نے یہ بھی محسوس کیا ہوگا کہ میں بہت صاف گوئی سے بات کرتا ہوں، لہذا یہ سمجھا جا سکتا ہے کہ صاف گوئی کی کوئی کمی نہیں ہے۔ اگر وہ اسے سننا چاہتے ہیں تو مجھے یقین ہے کہ وہ سنیں گے۔”چین کے ساتھ مشرقی لداخ میں سرحد کے ساتھ تعطل کا حوالہ دیتے ہوئے وزیر خارجہ نے کہا کہ “ہم اپنے تعلقات میں خاص طور پر خراب دور سے گزر رہے ہیں کیونکہ انہوں نے ان معاہدوں کی خلاف ورزی کرتے ہوئے کچھ اقدامات کیے ہیں جس کی ان کے پاس وضاحت نہیں ہے، جس پر ہم اعتماد کر سکیں۔ اس سے یہ اشارہ ملتا ہے کہ یہ سوچنا چاہیے کہ وہ ہمارے تعلقات کو کس طرف لے جانا چاہتے ہیں لیکن جواب دینا ان کا کام ہے۔”بھارت اور چین کی افواج کے درمیان مشرقی لداخ میں سرحد پر تعطل کی صورتحال گزشتہ سال 5 مئی کو پیدا ہوئی تھی۔ دونوں کے درمیان پنگانگ جھیل سے متصل علاقوں میں پرتشدد جھڑپیں بھی ہوئیں اور دونوں ممالک نے اپنے ہزاروں فوجی اور ہتھیار وہاں تعینات کر رکھے تھے۔گزشتہ سال 15 جون کو وادی گالوان میں پرتشدد جھڑپوں کے بعد کشیدگی مزید بڑھ گئی۔تاہم، فوجی اور سفارتی بات چیت کے کئی دور کے بعد دونوں فریق فروری میں پنگانگ جھیل کے شمالی اور جنوبی کناروں سے اور اگست میں گوگرا کے علاقے سے اپنے فوجیوں کو واپس بلانے پر رضامند ہوئے۔ 10 اکتوبر کو ہوئے فوجی مذاکرات بے نتیجہ رہے تھے۔سخت سردیوں کے دوران بھی مشرقی لداخ کے ہر طرف بڑی تعداد میں افواج کا جمع ہونا اس بات کی نشاندہی کرتا ہے کہ تنازعات کو ختم کرنا ابھی آسان نہیں ہے۔ جمعرات کو دونوں ممالک کے درمیان 14 ویں دور کی بھی بات چیت ہوئی۔

متعلقہ خبریں

جموں کے بکرم چوک میں ایک المناک حادثے میں گاڑی دریا تیوی میں گر گئی جس کے نتیجے میں ڈرائیو اور کنڈیکٹر کی موت ہوئی پولیس.

پولیس نے دعویٰ کیا ہے کہ سادھنا ٹاپ پر خاتون سمیت تین افراد سات کلو نارکوٹکس اور 2آئی ای ڈی سمیت گرفتار کئے گئے پولیس.

گاندربل میں نوجوان کو مردہ پایا گیا وسطی ضلعع گاندربل کے گاڈوہ کھیتوں میں 28سال کے نوجوان کی نعش برآمد کرلی گئی پولس.

صدرِ جموں وکشمیر نیشنل کانفرنس و رکن پارلیمان ڈاکٹر فاروق عبد للہ نے حضرت میرک شاہ صاحب ؒ کے سالانہ عرص مبارک باد.

کونہِ بل پانپور میں آج صبح ایک دلدوز سانحہ پیش آیا جسمیں دو افراد موت کی آغوش میں چلے گۓ۔ کونہِ بل علاقے میں کھیتوں.