ویڑیو

ای پیپر

اہم خبریں

صدرِ جموں وکشمیر نیشنل کانفرنس و رکن پارلیمان ڈاکٹر فاروق عبد للہ نے حضرت.

کونہِ بل پانپور میں آج صبح ایک دلدوز سانحہ پیش آیا جسمیں دو افراد موت کی.

جنوبی قصبہ قاضی گنڈ میں ٹرین کی ٹکر سے 50 سال کی خاتون لقمہ اجل بن گئیں فہمیدہ.

ملک میں کووڈ کی وجہ سے اب تک ایک لاکھ 47ہزار سے زائد بچے یتیم ہوئے کووڈ سے یتیم ہونے والے بچوں نے اپنے ماں ، باپ یا دونوں کو کھویا ہے ۔ کمیشن حقوق اطفال

   70 Views   |      |   Saturday, May, 28, 2022

سرینگر/18جنوری/ملک میں یکم اپریل 2020سے اب تک کوروناوائرس ، دیگر بیماریوں اور حادثات کی وجہ سے ایک لاکھ 47ہزار سے زائد بچے اپنے والدین یا ماں ، باپ میں سے ایک کوکھوچکے ہیں جبکہ یتیم ہونے والے بچوں نے زیادہ تر اپنے والدین کووڈکی وجہ سے کھودئے ہیں۔ قومی کمیشن برائے تحفظ حقوق اطفال نے عدالت عظمیٰ میں اس سلسلے میںتفصیلات دائر کرتے ہوئے کہا ہے کہ اپریل 2020سے اب تک کل 1,47,492بچے کووڈ 19اور دیگر وجوہات کی وجہ سے اپنے ماں ، باپ یا دونوں سے محروم ہوچکے ہیں ۔ کرنٹ نیو ز آف انڈیا کے مطابق نیشنل کمیشن برائیے تحفظ حقوق اطفال نے عدالت عظمیٰ کو مطلع کیا ہے کہ یکم اپریل 2020سے اب تک کل 1,47,492بچے کووڈ 19اور دیگر وجوہات کی وجہ سے اپنے ماں ، باپ یا دونوں سے محروم ہوچکے ہیں ۔ کووڈ کی عالمی وبائی امراض کے دوران والدین کھوجانے کی وجہ سے دیکھ بھال کی ضرورت والے بچوں کے بارے میں از خود نوٹس میں تفصیلات دیتے ہوئے این سی پی سی آر نے بتایا کہ اس کے اعداد و شمار ریاستوں اور مرکز کے زیر انتظام علاقوں کے ذریعہ اپنے ’بال سوراج پورٹل‘پر اپ لوڈ کردہ ڈیٹا پر مبنی ہیں۔ریاستوں،مرکز کے زیر انتظام علاقوں کے ذریعہ ’بال سوراج پورٹل-COVID کیئر‘پر اپ لوڈ کیے گئے بچوں کا ڈیٹا بچوں کی دونوں قسموں پر مشتمل ہے، جس میں بچہ اپنے والدین میں سے کسی ایک کو بیماری یا دوسری صورت میں اپریل 2020 کے بعد سے COVID-19 سے کھو چکا ہے۔ کمیشن نے کہا کہ 11 جنوری تک اپ لوڈ کردہ اعداد و شمار سے پتہ چلتا ہے کہ دیکھ بھال اور تحفظ کی ضرورت والے بچوں کی حالت میں یتیم (10,094)، والدین میں سے کسی ایک سے محروم (1,36,910) اور لاوارث (488) شامل ہیں جن کی مجموعی تعداد 1,47,492 ہوگئی۔جنس کے لحاظ سے تقسیم میں کمیشن نے کہا کہ 1,47,492 بچوں میں سے 76,508 لڑکے، 70,980 لڑکیاں اور چار خواجہ سرا ہیں۔اس میں کہا گیا ہے کہ بچوں کی زیادہ سے زیادہ تعداد آٹھ سے 13 سال کی عمر کے گروپ (59,010) کے درمیان ہے، اس کے بعد 14 سے 15 سال کی عمر کے بچے (22,763) اور 16 سے 18 سال کی عمر کے گروپ (22,626) اور چار۔ سات سال تک (26,080)بچے ہیں۔کمیشن نے بچوں کی پناہ گاہ کی موجودہ صورتحال بھی متعدد باتیں بتائی اور کہا کہ زیادہ سے زیادہ بچے اپنے واحد والدین کے پاس ہیں -1,25,205، جب کہ 11,272 بچے خاندان کے افراد کے ساتھ ہیں، اس کے بعد 8,450 سرپرستوں کے پاس ہیں۔رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ 1,529 بچے چلڈرن ہومز میں، 19 اوپن شیلٹر ہومز میں، دو آبزرویشن ہومز میں، 188 یتیم خانوں میں، 66 خصوصی گود لینے والی ایجنسیوں میں اور 39 ہاسٹلز میں ہیں۔اپریل 2020 سے کووڈ اور دیگر وجوہات کی وجہ سے اپنے ماں یا باپ یا دونوں والدین کو کھونے والے بچوں کی ریاست کے لحاظ سے تفصیلات بتاتے ہوئے کمیشن نے کہا کہ ایسے بچوں کی سب سے زیادہ تعداد اڈیشہ سے ہے (24,405)، اس کے بعد مہاراشٹر (19,623) ، گجرات (14,770)، تمل ناڈو (11,014)، اتر پردیش (9،247)، آندھرا پردیش (8،760)، مدھیہ پردیش (7،340)، مغربی بنگال (6،835) دہلی (6،629) اور راجستھان میںایسے بچوں کی تعداد (6،827)ہے ۔کمیشن نے کہا کہ وہ اس بات کو یقینی بنانے کے لیے اقدامات کر رہا ہے کہ بچے اس وبائی مرض میں بری طرح متاثر نہ ہوں۔اس تناظر میں، این سی پی سی آر ہر ریاستوں، مرکز کے زیر انتظام علاقوں کے بچوں کے حقوق کے تحفظ کے لیے ریاستی کمیشنوں کے ساتھ ورچوئل میٹنگز کر رہا ہے تاکہ COVID وبائی بیماری کی تیسری لہر کی صورت میں تیاری کی تازہ ترین صورتحال کو جان سکے۔کمیشن نے سپریم کورٹ کو مطلع کیا کہ وہ ہر ریاستUT کے SCPCRs کے ساتھ زون وار میٹنگز کر رہا ہے اور شمال مشرقی ریاستوں کے ساتھ ایک ورچوئل میٹنگ 19 جنوری کو ہونے والی ہے۔

متعلقہ خبریں

صدرِ جموں وکشمیر نیشنل کانفرنس و رکن پارلیمان ڈاکٹر فاروق عبد للہ نے حضرت میرک شاہ صاحب ؒ کے سالانہ عرص مبارک باد.

کونہِ بل پانپور میں آج صبح ایک دلدوز سانحہ پیش آیا جسمیں دو افراد موت کی آغوش میں چلے گۓ۔ کونہِ بل علاقے میں کھیتوں.

جنوبی قصبہ قاضی گنڈ میں ٹرین کی ٹکر سے 50 سال کی خاتون لقمہ اجل بن گئیں فہمیدہ بانو زوجہ بشیر احمد ساکنہ پازنتھ نامی.

سرینگر کے صورہ اور اونتی پورہ کے آگہانجی پورہ علاقوں میں فوج و فورسز اور عسکریت پسندوں کے مابین مسلح تصادم آرائیوں.

سرینگر /26مئی جنوبی قصبہ اونتی پورہ کے آگہناز پورہ علاقے میں جمعرات کی شام فوج و فورسز اور عسکریت پسندوں کے مابین.