ویڑیو

ای پیپر

اہم خبریں

جموں کے بکرم چوک میں ایک المناک حادثے میں گاڑی دریا تیوی میں گر گئی جس کے.

پولیس نے دعویٰ کیا ہے کہ سادھنا ٹاپ پر خاتون سمیت تین افراد سات کلو نارکوٹکس.

گاندربل میں نوجوان کو مردہ پایا گیا وسطی ضلعع گاندربل کے گاڈوہ کھیتوں میں.

7 ماہ میں45ہزار کروڑ روپے کی سرمایہ کاری کی تجاویز موصول‘:منوج سنہا

   120 Views   |      |   Sunday, May, 29, 2022

’ کاروباری شعبے میں ترقی کی رفتار غیر تصوراتی
سری نگر:۳،جنوری//جموں وکشمیر کے لیفٹنٹ گورنر منوج سنہاکاکہناہے کہ مرکز کے زیر انتظام علاقہ نہ صرف گڈ گورننس کے اصولوں کو مستقل طور پر اپنا رہا ہے بلکہ معاشرے کے سب سے زیادہ کمزور طبقوں کے خدشات کو دور کرنے میں بھی ایک غیرمعمولی تبدیلی لا رہا ہے۔جے کے این ایس مانٹرینگ ڈیسک کے مطابق انگریزی روزنامہ ’دی انڈین ایکسپریس‘میں چھپے مضمون بعنوان’جموں و کشمیر کی کہانی اب مایوسی کا شکار نہیں ہے‘میں لیفٹنٹ گورنر منوج سنہانے لکھاہے کہ جموں وکشمیر میں اعدادوشمار زمینی حقیقت کی عکاسی کرتے ہیں۔’ ہم نے اقتصادی ترقی اور روزگار کے اہداف کو آگے بڑھاتے ہوئے گزشتہ7 دہائیوں کے رجحان کو تبدیل کرنے میں کامیاب ہو گئے ہیں‘۔منوج سنہانے لکھاہے کہ مرضی کی توانائی سے زیادہ وسیع پیمانے پر کوئی چیز انسان کو انسان سے ممتاز نہیں کرتی۔1830 میں، اپنے ایک مضمون میں، امریکی صحافی اور خواتین کے حقوق کی وکیل، مارگریٹ فلر نے ایک روشن مستقبل کی تعمیر کے لئے تخیل، استقامت اور اعتماد کی ضرورت پر زور دیا۔ مرکز کے زیر انتظام جموں و کشمیر کا عوام پر مبنی ترقی کا عزم بھی ایک عملی تخیل، استقامت اور اعتماد پر منحصر ہے۔جموں وکشمیر کے لیفٹنٹ گورنرنے اپنے تحریر کردہ مضمون میں آگے لکھاہے کہ وبائی مرض نے انسانوں کو بہت زیادہ نقصان پہنچایا۔ تاہم جموں و کشمیر کے لوگوں کی لچک نے حکومت میں ہمیں واپس اچھالنے میں مدد کی ہے۔ جموں و کشمیر کی کہانی اب مایوسی اور مایوسی میں نہیں ڈالی گئی ہے۔ انہوںنے یہ بھی لکھاہے کہ مرکز کے زیر انتظام علاقہ کے سنگ میل اور کامیابیاں آزادی کا امرت مہوتسو منانے والے ملک کے مزاج میں اضافہ کر رہی ہیں۔ یہ ظاہر کرتا ہے کہ جموں و کشمیر نہ صرف گڈ گورننس کے اصولوں کو مستقل طور پر اپنا رہا ہے بلکہ معاشرے کے سب سے زیادہ کمزور طبقوں کے خدشات کو دور کرنے میں بھی ایک زلزلہ تبدیلی لا رہا ہے۔ منوج سنہاکاکہناہے کہ اعداد زمینی حقیقت کی عکاسی کرتے ہیں۔ ہم نے اقتصادی ترقی اور روزگار کے اہداف کو آگے بڑھاتے ہوئے گزشتہ سات دہائیوں کے رجحان کو تبدیل کرنے میں کامیاب ہو گئے ہیں۔ اس کے ساتھ بنیادی ڈھانچے میں تیزی سے اضافہ ہے۔انہوںنے مزیدلکھاہے کہ کاروباری شعبے میں ترقی بھی غیر تصوراتی رفتار سے ہوئی، اور 7 ماہ کے اندر، جموں و کشمیر مختلف صنعتوں سے45ہزار کروڑ روپے کی سرمایہ کاری کی تجاویز حاصل کرنے میں کامیاب رہا۔جموں وکشمیر کے لیفٹنٹ گورنر منوج سنہامضمون میں یہ بھی لکھاہے کہ پہلی مرتبہ رئیل اسٹیٹ سمٹ میں18300 کروڑ روپے کے 39 مفاہمت نامے سامنے آئے۔ ’’ہمارا مقصد بہت واضح ہے – معیشت کے لیے ایک صنعتی بنیاد بنانا اور مقامی اداروں اور سماجی استحکام کو مضبوط کرنا‘‘۔انہوںنے آگے لکھاہے کہ ہم نے صرف پچھلے سال میں21943 پروجیکٹ مکمل کئے جو جموں و کشمیر کی تاریخ میں ایک بے مثال کارنامہ ہے۔ وزیر اعظم نریندر مودی کی رہنمائی کے تحت، مرکز مرکز کے زیر انتظام علاقے کے لیے مضبوط انفراسٹرکچر(بنیادی ڈھانچہ) بنا رہا ہے۔منوج سنہاکاکہناہے کہ پرائم منسٹر ڈیولپمنٹ پیکیج (PMDP) کے تحت 21 میگا پروجیکٹس مکمل ہو چکے ہیں اور رواں مالی سال کے اختتام تک9 مزید مکمل ہونے کا امکان ہے۔انہوں نے کہاہے کہ اگلے5 سالوں میں بجلی پیدا کرنے کی صلاحیت کو دوگنا کرنے کا ارادہ ہے، اور ایک لاکھ کروڑ روپے کے سڑک اور ٹنل پروجیکٹوں پر عمل درآمد کیا جا رہا ہے۔ 11 ہزار خالی سرکاری آسامیاں مکمل شفافیت اور میرٹ پر پْر کی گئیں جو جموں و کشمیر کی تاریخ کا ایک اور ریکارڈ ہے۔ جموں وکشمیر تزئین و آرائش، نئے سرے سے ایجاد کرنے اور غیر صنعتی خطہ بننے سے ملک کے سب سے تیزی سے ترقی کرنے والے علاقوں میں سے ایک تک پہنچنے کے مشن پر ہے۔جموں وکشمیر کے لیفٹنٹ گورنر منوج سنہاکاکہناہے کہ خواہشات اور ضروریات کو پورا کرنا شہریوں پر احسان نہیں ہے۔ انتظامیہ کا فرض ہے کہ عوامی خدمات کی مناسب مدت میں فراہمی کو یقینی بنائے اور لوگوں کی شکایات کا ازالہ کیا جائے۔ جموں و کشمیر میں، تاہم، حکمرانی ماضی میں مراعات یافتہ چند لوگوں کے لیے موجود رہی ہے۔انہوںنے لکھاہے کہ جامع پالیسیوں کے فقدان کی وجہ سے آبادی کی اکثریت غوط زن تھی۔ بڑے پیمانے پر تجاوزات، اراضی کی غیر قانونی منتقلی اور تکلیف دہ فروخت کی وجہ سے لوگوں کو اپنی زمین کا ریکارڈ دیکھنے کے بنیادی حقوق سے بھی محروم رکھا گیا۔ ہم نے ہر گاؤں میں’آپکی زمین آپکی نگرانی‘کے نام سے ایک مہم شروع کی ہے تاکہ یہ یقینی بنایا جا سکے کہ تمام زمیندار اپنی زمین کے ریکارڈ تک رسائی حاصل کر سکیں۔ اس کا مقصد تجاوزات اور غیر قانونی اندراجات کے خاتمے کے ذریعے لوگوں کو بااختیار بنانا ہے۔منوج سنہانے یہ بھی لکھاہے کہ اچھی حکمرانی کے اہم اصولوں میں سے ایک کھلا پن اور شفافیت ہے۔ میرا ماننا ہے کہ لوگوں کو ترقیاتی منصوبوں سے متعلق تمام معلومات تک رسائی ہونی چاہیے اور نظام میں شفافیت کو فعال کرنے کے لیے کام کی100 فیصد کھلی بولی لازمی ہونی چاہیے۔انہوںنے کہاہے کہ پوری معلومات اب ایک بٹن کے کلک پر دستیاب ہے۔ کسی علاقے میں جاری تمام کاموں کی آن لائن تفصیلات تک رسائی کا ایک آسان عمل، کو مجموعی ترقیاتی عمل میں لوگوں کی شرکت کو مطلع کرنے اور ان کی درخواست کرنے اور بدعنوانی سے پاک اور صاف حکمرانی کی پیشکش کے لیے دستیاب کرایا گیا ہے۔انہوںنے کہاہے کہ کہ ایک غیر معمولی پالیسی فریم ورک اور بیان کردہ نتائج کے ساتھ، ہم ایک اجتماعی کوشش کر رہے ہیں جو مرکزکے زیرانتظام علاقہ کی تقدیر بدل دے گی۔’’ ہم نے عوام پر مبنی پالیسیوں کو تیز کرنے کے واحد مقصد کے ساتھ اختیارات کو مرکزیت دینے کے لیے بھی کئی اہم اقدامات کیے ہیں، چاہے وہ بنیادی ڈھانچے کی ترقی سے متعلق ہو یا زرعی اصلاحات، گاؤں کی سطح کے کاروباری پروگرام یا دیہی خواتین کے لیے مواقع پیدا کرنا‘‘۔جموں وکشمیر کے لیفٹنٹ گورنر منوج سنہانے مضمون کے آخرمیں لکھاہے کہ مجھے یقین ہے کہ شراکتی پالیسی سازی سماجی مساوات کی تلاش ہے۔ اسی لیے نچلی سطح کے اداروں کو مضبوط اور مستحکم کرنے کے لیے فنڈز، افعال اور کارکنان تیار کئے گئے ہیں۔4 لاکھ سے زیادہ خواتین کو52ہزار سیلف ہیلپ گروپس میں تقسیم کیا گیا ہے تاکہ انہیں روزگار اور عزت مل سکے۔ ہم نے جنگلاتی حقوق ٓ کو لاگو کرکے درج فہرست قبائل کو بااختیار بنانے کا تاریخی قدم اٹھایا ہے۔

متعلقہ خبریں

جموں کے بکرم چوک میں ایک المناک حادثے میں گاڑی دریا تیوی میں گر گئی جس کے نتیجے میں ڈرائیو اور کنڈیکٹر کی موت ہوئی پولیس.

پولیس نے دعویٰ کیا ہے کہ سادھنا ٹاپ پر خاتون سمیت تین افراد سات کلو نارکوٹکس اور 2آئی ای ڈی سمیت گرفتار کئے گئے پولیس.

گاندربل میں نوجوان کو مردہ پایا گیا وسطی ضلعع گاندربل کے گاڈوہ کھیتوں میں 28سال کے نوجوان کی نعش برآمد کرلی گئی پولس.

صدرِ جموں وکشمیر نیشنل کانفرنس و رکن پارلیمان ڈاکٹر فاروق عبد للہ نے حضرت میرک شاہ صاحب ؒ کے سالانہ عرص مبارک باد.

کونہِ بل پانپور میں آج صبح ایک دلدوز سانحہ پیش آیا جسمیں دو افراد موت کی آغوش میں چلے گۓ۔ کونہِ بل علاقے میں کھیتوں.