ویڑیو

ای پیپر

اہم خبریں

اورنگ آباد۔ انجمن فروغ سائنس، چیپٹر اورنگ آباد(مہاراشٹر) کے مجلس عاملہ.

محترمہ رخسانہ جبین اور پروفیسر محفوظہ جان کو ادارے کی طرف سے شاندار ادبی.

وسطی کشمیر کے ضلع بڈگام کے بدرن ماگام میں تحریک ساز ادبی اور ثقافتی انجمن.

زیون حملہ ، عسکریت پسند پولیس اہلکاروں سے ہتھیار چھیننے کی کوشش میں تھے جس کو ناکام بنایا گیا

   110 Views   |      |   Thursday, August, 18, 2022

زاکورہ جھڑپ میں مارے گئے عسکریت پسندوں کا تعلق کولگام اور پلوامہ سے جنوبی کشمیر سے اب جنگجو سرینگر کا رخ کرتے ہیں ، ان کے خلاف کارورائی جاری صحافی فہد شاہ کے خلاف تین کیس درج ، وہ عسکریت پسندی کو بڑھائوا دینے میںملوث / آئی جی پی کشمیر

حملہ میں تین جیش جنگجو ملوث جن میں سے ایک مقامی ، زخمی جنگجو کے خون کے نشانہ سے پتہ چلا کہ جنگجو ترال پہنچ گئے
حملہ آور جنگجو گرو پ کی تلاش بڑے پیمانے پر جاری ، پولیس اہلکار اب سے بلٹ پروف گاڑیوں میں سفر کریں گے / آئی جی پی
سرینگر /14دسمبر/سی این آئی// زیون حملہ پولیس اہلکاروں سے ہتھیار چھینے کی ایک کوشش تھی جس کو فورسز نے ناکام بنایا کی بات کرتے ہوئے آئی جی پی کشمیر وجے کمار نے کہا کہ تین جیش جنگجوئوں جن میں ایک مقامی بھی تھا نے حملہ کیا ۔ انہوں نے کہا کہ زخمی جنگجو کے خون کے نشانہ سے یہ خدشہ ظاہر کیا جا رہا ہے کہ حملے میں ملوث جنگجو ترال میں چھپے بیٹھے ہیں جن کو ڈھونڈ نکالنے کیلئے آپریشن بڑے پیمانے پر جاری ہے ۔ اسی دوران انہوں نے مزید کہا کہ آج سے پولیس اہلکار بلٹ پروف گاڑیوں میں سوار ہونگے ۔ سی این آئی کے مطابق زیون سرینگر حملے میں ہلاک ہوئے پولیس اہلکاروں کو خروج عقیدت پیش کرنے کیلئے سرینگر میں منعقدہ ایک تقریب کے بعد میڈیا نمائندوں کے ساتھ بات کرتے ہوئے آئی جی پی کشمیر وجے کمار نے کہا کہ اے آر پی 9 بٹالین کے 25 پولیس اہلکاروں کو سرینگر سے پولیس آرمڈ کمپلیکس زیون لے جانے والی بس پر شام تقریباً 6 بجے جیش محمد کے تین عسکریت پسندوں نے حملہ کیا جن میں دو غیر ملکی اور ایک مقامی تھا ۔ انہوں نے کہا کہ حملہ اصل میں پولیس اہلکاروں سے ہتھیا ر چھینے کی ایک کوشش تھی جس کو پولیس اہلکاروں نے جوابی کارروائی میںناکام بنایا ۔ انہوں نے کہا کہ اس حملے میں 14پولیس اہلکار زخمی ہو گئے جن میںسے بعد میں اے ایس آئی سمیت دو پولیس اہلکاروں نے ہسپتال میں دم توڑ دیا جبکہ اور منگل کی صبح مزید ایک پولیس اہلکار کی موت ہوئی جس کے بعد ہلاک ہونے والوں کی تعداد تین ہوگئی ہے۔ایک سوال کے جواب میںانہوں نے کہا کہ واقعی یہ ایک منصوبہ بند حملہ تھا کیونکہ عسکریت پسندوں نے اس بس پر اندھا دھند فائرنگ کی جو روزانہ اسی روٹ پر چلتی ہے۔اس طرح کے حملوں کو روکنے کے لیے پولیس کی جانب سے اٹھائے گئے اقدامات کے بارے میں آئی جی پی نے کہا کہ پولیس الرٹ ہے اور پولیس اہلکاروں کو ایک جگہ سے دوسری جگہ سفر کرنے کی ضرورت میں انہیں بلٹ پروف گاڑیاں فراہم کی جائیں گی۔اْن کا مزید کہنا تھا کہ ’’حملہ آوروں نے تب کارروائی کی جب سکیورٹی فورسز کی روڈ اوپننگ پارٹیز کو واپس لے لیا گیا تھا‘‘۔ جیش محمد نے اس حملے کی ذمہ داری لی ہے اور ہم جلد ہی اس حملے میں ملوث عسکریت پسندوں کو گرفتار کر لیں گے۔ آئی جی پی کشمیر نے کہا کہ حملے میںتین جیش جنگجو ملوث ہے جن میںسے ایک مقامی ہے اور جوابی کارورائی کے دوران ایک جنگجو زخمی ہو گیا جس کے خون کے نشانہ سے پتہ چلتا ہے کہ حملہ آوروں کا یہ گروپ پہلے پامپور اور پھر ترال علاقے میں پہنچ گیا ہے۔ انہو ں نے کہا کہ ہمیں اس گروپ سے متعلق دیگر اطلاعات بھی فراہم ہو رہی ہے اور جلد ہی اس گروپ کو کیفر کردار تک پہنچایا جائے گا ۔

متعلقہ خبریں

اورنگ آباد۔ انجمن فروغ سائنس، چیپٹر اورنگ آباد(مہاراشٹر) کے مجلس عاملہ کا انتخاب سپریم گلوبل اسکول کے میٹنگ ہال.

محترمہ رخسانہ جبین اور پروفیسر محفوظہ جان کو ادارے کی طرف سے شاندار ادبی اعزاز “نشانٍ کشمیر” عطا کیا جانے.

وسطی کشمیر کے ضلع بڈگام کے بدرن ماگام میں تحریک ساز ادبی اور ثقافتی انجمن گلشن کلچرل فورم کشمیرکے اہتمام سے منعقدہ.

قاضٰ گنڈ :جنوبی کشمیر کے کولگام ضلع میں قاضی گنڈ کے مقام پر آج دو پہر جموں سے سرینگر آرہی یا تریو سے بھری ایک.

عوام میں تفرقہ ڈالنے والوں سے ہوشیار رہنے کی ضرورت:/ڈاکٹر فاروق عبداللہ
سرینگر// 6جولائی //این این این جموں وکشمیر.