ویڑیو

ای پیپر

اہم خبریں

جموں کے بکرم چوک میں ایک المناک حادثے میں گاڑی دریا تیوی میں گر گئی جس کے.

پولیس نے دعویٰ کیا ہے کہ سادھنا ٹاپ پر خاتون سمیت تین افراد سات کلو نارکوٹکس.

گاندربل میں نوجوان کو مردہ پایا گیا وسطی ضلعع گاندربل کے گاڈوہ کھیتوں میں.

یوپی کے مختلف اضلاع سے ہر روز تین لڑکیاں ہوتی ہیں غائب

   63 Views   |      |   Saturday, May, 28, 2022

یوپی کے مختلف اضلاع سے ہر روز تین لڑکیاں ہوتی ہیں غائب

پچاس اضلاع سے آر ٹی آئی کے جواب میں چونکا دینے والا انکشاف

سرینگر/27نومبر/اس بات کاسنسنی خیز انکشاف ہوا ہے کہ اُترپردیش میں ہر روز اوسطا تین لڑکیاں غائب کردی جاتی ہیں اور اس وقت بھی تین سوکے قریب کنبے اپنی لاڈلی بیٹیوں کے منتظر ہیں۔ روزانہ تین لڑکیوں کا لاپتہ ہونا تشویشناک ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ یا تو لڑکیوں کو محبت کے جال میں پھنسایا جا رہا ہے یا پھر انہیں جسم فروشی پر مجبور کیا جا رہا ہے۔کرنٹ نیوز آف انڈیا کے مطابق حکومتیں بیٹیوں کے تحفظ کے لاکھ دعوے کریں لیکن بیٹیاں آج بھی عدم تحفظ کا شکار ہیں۔ اتر پردیش سے روزانہ تین بیٹیاں لاپتہ ہو رہی ہیں۔ یہ سنسنی خیز انکشاف رائٹ ٹو انفارمیشن (آر ٹی آئی) سے ملی معلومات میں ہوا ہے۔ 50 اضلاع سے موصولہ آر ٹی آئی کے جواب میں، اتر پردیش پولیس نے کہا کہ گزشتہ سال اتر پردیش سے کل 1,763 بچے لاپتہ ہوئے۔ جن میں 1,166 لڑکیاں ہیں۔ 1,080 لڑکیاں 12-18 سال کی عمر کے گروپ میں ہیں۔ کل لاپتہ لڑکیوں میں سے 966 لڑکیاں بازیاب ہوچکی ہیں۔ دو سو لڑکیاں تاحال لاپتہ ہیں۔آگرہ کے آر ٹی آئی اور بچوں کے حقوق کے کارکن نریش پارس نے سال 2020 میں اتر پردیش پولیس سے لاپتہ بچوں کے بارے میں معلومات مانگی تھیں۔اب تک 1461 بچے بازیاب ہو چکے ہیں۔ 302 بچے تاحال لاپتہ ہیں۔ جس میں 102 لڑکے اور دو سو لڑکیاں ہیں۔ 50 اضلاع کا تجزیہ کرنے کے بعد پتہ چلتا ہے کہ اتر پردیش سے روزانہ تقریباً پانچ بچے لاپتہ ہو رہے ہیں۔ کچھ اضلاع کی پولیس نے آر ٹی آئی کا جواب دینے سے صاف انکار کر دیا ہے۔نریش پارس نے لاپتہ بچوں پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ بچے کہاں جارہے ہیں۔ روزانہ پانچ بچوں کا ضائع ہونا تشویشناک ہے۔ لاپتہ بچہ چار ماہ تک بازیاب نہ ہونے کی صورت میں تحقیقات انسداد انسانی اسمگلنگ برانچ کو منتقل کرنے کا انتظام ہے۔ اس کے باوجود لاپتہ بچوں کا گراف مسلسل بڑھ رہا ہے۔ لڑکیوں کی تعداد اس سے بھی زیادہ پریشان ہے۔ 12-18 سال کی لڑکیاں زیادہ غائب ہو رہی ہیں۔ یا تو لڑکیاں محبت کے جال میں پھنس رہی ہیں یا پھر انہیں جسم فروشی میں دھکیلا جا رہا ہے۔عوامی سماعت ہر ضلع میں کی جائے۔نریش پارس نے کہا کہ لاپتہ بچوں کی عوامی سماعت ہر ضلع کے پولیس ہیڈکوارٹر میں ہونی چاہئے۔ جس میں تھانے کے تفتیشی افسر اور اہل خانہ کو بلا کر کیس کا جائزہ لیا جائے۔ چار ماہ تک بچہ نہ ملنے پر انسداد انسانی اسمگلنگ پولیس اسٹیشن سے تفتیش کرائی جائے۔ یہ تھانے ہر ضلع میں کھولے گئے ہیں۔

متعلقہ خبریں

جموں کے بکرم چوک میں ایک المناک حادثے میں گاڑی دریا تیوی میں گر گئی جس کے نتیجے میں ڈرائیو اور کنڈیکٹر کی موت ہوئی پولیس.

پولیس نے دعویٰ کیا ہے کہ سادھنا ٹاپ پر خاتون سمیت تین افراد سات کلو نارکوٹکس اور 2آئی ای ڈی سمیت گرفتار کئے گئے پولیس.

گاندربل میں نوجوان کو مردہ پایا گیا وسطی ضلعع گاندربل کے گاڈوہ کھیتوں میں 28سال کے نوجوان کی نعش برآمد کرلی گئی پولس.

صدرِ جموں وکشمیر نیشنل کانفرنس و رکن پارلیمان ڈاکٹر فاروق عبد للہ نے حضرت میرک شاہ صاحب ؒ کے سالانہ عرص مبارک باد.

کونہِ بل پانپور میں آج صبح ایک دلدوز سانحہ پیش آیا جسمیں دو افراد موت کی آغوش میں چلے گۓ۔ کونہِ بل علاقے میں کھیتوں.