کرتا ہوں صُبح و شام میں مدحت رسُول کی 100

کرتا ہوں صُبح و شام میں مدحت رسُول کی

نعت رسولؐ

پرویز مانوس

 

کرتا ہوں صُبح و شام میں مدحت رسُول کی
دل میں بسی ہے اس طرح اُلفت رسُول کی

قبضہ ہے گرچہ ذہن پر افکارِ وقت کا
لیکن ہے میرے دل پہ حکومت رسُول کی

خوابوں میں بڑھ کے مُہرِ نبوت کو چوُم لوگوں
تڑپا رہی ہے یوں مجھے فُرقَت رسُول کی

ہر سُو جو ایک نُور فضاء میں تھا جلوہ ریز
تھی رشکِ ماہتاب وہ صورت رسُول کی

یہ معجزہ کہ رہتے ہوئے جھونپڑے میں بھی
ظاہر ہوئی جہان پہ عظمت رسُول کی

طائف میں سنگ پھینکنے والوں کو دی دُعا
کس درجہ دلنواز تھی فِطرت رسُول کی

یوں رب سے گفتگو شبِ معراج میں ہوئی
جاگی مائکہ میں بھی رغبت رسُول

آسی لگائے آس یہ بیٹھے ہیں حشر میں
ہو گی نصیب ہم کو شفاعت رسُول کی

مال و متاع اُن کو ملے، مانگتے ہیں جو
مانوس صرف چاہے گا قُربت رسُول کی

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں