ویڑیو

ای پیپر

اہم خبریں

عوام کی راحت رسانی اور متاثرین کی فوری بازآبادکاری کیلئے ٹھو س اقدامات.

سکھ یاتریو ںکا جتھا برسی میں شرکت کیلئے پاکستان پہنچ گیا سرینگر /22/جون 2022/.

حکومت کو چاہئے کہ وہ ہمارے دفاع کو مضبوط کرے لیکن اگنی پتھ اسکیم سے کمزور.

دفاع اور جوہری ٹیکنالوجی جیسے حساس شعبوں میں بھارت انتہائی مضبوط / فام سنہ چائو

   43 Views   |      |   Friday, June, 24, 2022

دفاع اور جوہری ٹیکنالوجی جیسے حساس شعبوں میں بھارت انتہائی مضبوط / فام سنہ چائو

امن، استحکام اور بات چیت کے ماحول کو فروغ دینے کیلئے مشرقی ایشیائی قوم کی مدد صرف بھارت کرسکتا ہے

سرینگر //15مئی //این این این //بھارت میں ویتنام کے سفیر فام سنہ چائو نے کہا ہے کہ ویتنام کے ہندوستان کے ساتھ انتہائی خوشگوار تعلقات ہیں کیونکہ مشترکہ اقدار جو امن، استحکام اور بات چیت کے ماحول کو فروغ دیتی ہیں اور صرف ہندوستان ہی ’’حساس علاقوں‘‘‘میں جنوب مشرقی ایشیائی قوم کی مدد کرسکتا ہے۔ندا نیوز نیٹ ورک کے مطابق چائو نے مرچنٹس چیمبرز آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے زیر اہتمام ایک انٹرایکٹو سیشن میں کہا کہ تمام قومیں دوستانہ ہیں لیکن ہمارے کچھ ممالک کے ساتھ انتہائی خوشگوار تعلقات ہیں اور ہندوستان بھی ان میں شامل ہے۔ قابل ذکر بات یہ ہے کہ ویت نام اور ہندوستان ان 35 ممالک میں شامل تھے جنہوں نے اقوام متحدہ میں روس کے یوکرین پر حملے کی مذمت میں اقوام متحدہ کی قرارداد سے پرہیز کیا۔ گزشتہ ماہ، ہندوستان اور ویتنام نے دونوں ممالک کے درمیان سفارتی تعلقات کے قیام کی 50 ویں سالگرہ کے موقع پر ایک دوسرے کی تعریف کی۔ وزیر اعظم نریندر مودی اور کمیونسٹ پارٹی آف ویتنام کے جنرل سیکرٹڑی نگوین پھو ٹرونگنے اپنی ٹیلی فونک بات چیت کے دوران ہندوستان ویتنام جامع اسٹریٹجک پارٹنرشپ کے تحت وسیع پیمانے پر تعاون کی تیز رفتاری پر اطمینان کا اظہار کیا جو مودی کے دورہ کے دوران قائم ہوئی تھی۔ مضبوط تعلقات کو دہراتے ہوئے، چائو نے کہا کہ ہندوستان کے سرکردہ چار لیڈران بشمول صدر رام ناتھ کووند، وزیر اعظم مودی، نائب صدر وینکیا نائیڈو اور لوک سبھا کے اسپیکر اوم برلا نے جنوب مشرقی ملک کا دورہ کیا ہے۔ ویتنام کی قومی اسمبلی کے چیئرمین وونگ ڈِن ہیو نے گزشتہ دسمبر میں ایک اعلیٰ سطحی پارلیمانی وفد کے ساتھ ہندوستان کا دورہ کیا تھا اور آسیان ملک کے تمام اعلیٰ رہنما بھی وقتاً فوقتاً ہندوستان آتے رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ 98.15 ملین افراد کی آبادی کے ساتھ، آسیان ممالک میں سب سے زیادہ، ویتنام ہندوستانی فارما سیکٹر کے لیے مزید توسیع کے لیے ایک بہترین موقع فراہم کرتا ہے۔ سیشن کے دوران دی گئی ایک پریزنٹیشن کے مطابق، ہندوستانی کمپنیوں کے پاس ٹیکسٹائل اور گارمنٹس، آئی ٹی، رئیل اسٹیٹ، زرعی مصنوعات، شمسی ٹیکنالوجی، تعلیم، الیکٹریکل اور الیکٹرانک ٹیکنالوجی کے آلات، صحت کی دیکھ بھال اور عمومی تجارت جیسے شعبوں میں سرمایہ کاری کی گنجائش ہے۔ مزدوری کی لاگت 3 ڈالرفی گھنٹہ اور 95 فیصد خواندگی کے ساتھ، ویتنام میں مینوفیکچرنگ کا سب سے بڑا مرکز بننے کی صلاحیت ہے، جہاں چین کی جگہ لیبر کی لاگت 6-7 ڈالر فی گھنٹہ ہے۔

متعلقہ خبریں

عوام کی راحت رسانی اور متاثرین کی فوری بازآبادکاری کیلئے ٹھو س اقدامات اٹھائے جائیں/ڈاکٹر فاروق سرینگر /22/جون.

سکھ یاتریو ںکا جتھا برسی میں شرکت کیلئے پاکستان پہنچ گیا سرینگر /22/جون 2022/ 500سکھ مسافر آج مہاراجہ رنجیت سنگھ کی.

حکومت کو چاہئے کہ وہ ہمارے دفاع کو مضبوط کرے لیکن اگنی پتھ اسکیم سے کمزور ہوجائے سرینگر /22/جون 2022/ کانگریس رہنما.

انسداد شدت پسندی ، تجارت، صحت، روایتی ادویات، ماحولیات اور اختراعات، زراعت پر بات ہو گی سرینگر /22/جون 2022/ وزیر اعظم.

دریا جہلم اور ندی نالوں میں پانی کی سطح میں اضافہ ہونے کے ساتھ ہی شمال و جنوب میں سیلابی صورتحال سرینگر.