ویڑیو

ای پیپر

اہم خبریں

سرینگر /22مئی / این این این
انتظامیہ کی جانب سے رہبر جنگلات، رہبر زراعت،.

سرینگر /22مئی / این این این بارشوں کے بعد جموں کشمیر کے کئی علاقوں میں شبانہ.

کیمپ میں سینکڑوں مریضوں کا طبی معائنہ کیا گیا اور مفت ادویات بھی تقسیم کی.

روس اور یوکرین کے مابین باضابطہ جنگ کا اثر جموں کشمیر پر بھی پڑے گا

   87 Views   |      |   Sunday, May, 22, 2022

روس اور یوکرین کے مابین باضابطہ جنگ کا اثر جموں کشمیر پر بھی پڑے گا

پیٹرولیم مصنوعات کے ساتھ ساتھ کھانے پینے اوردیگر اہم اشیاء کی قیمتوں میں اضافہ ہوگا
سرینگر/26فروری/روس یوکرین کے مابین باضابطہ جنگ چھڑ جانے کے نتیجے میں مہنگائی کا ایک اور دور شروع ہوگا اور عالمی سطح کے ساتھ ساتھ ملکی سطح پر بھی اشیاء ضروریہ کی قیمتوں میں اضافہ ہوسکتا ہے جبکہ جموں کشمیر میں بھی اس کا اثر براہ راست دیکھنے کو ملے گا۔ تیل کی قیمتوںمیں اضافہ ہونے کا قومی امکان ہے اور اگر ایسا ہے تو جموں کشمیر میں کھانے پینے کی تمام چیزوں بشمول سبزی ، پھل اور دیگر اشیاء کی قیمتیں بڑھیں گی ۔ اگر دو ملکوں کے درمیان باضابطہ جنگ ہوتی ہے تو اس کا پوری دنیا کی معیشتوں پر بڑا اثر پڑتا ہے اور پہلے ہی مہنگائی سے پریشان ہندوستان کے لیے یہ ایک دوہری مار سے کم نہیں ہو گا۔ آپ کو بتاتے چلیں کہ ملک یوکرین سے خوردنی تیل کی بڑی مقدار درآمد کرتا ہے۔ جی ہاں، یوکرین سورج مکھی کے تیل کا سب سے بڑا پیدا کرنے والا ملک ہے۔ بھارت کی بات کریں تو کچھ عرصے سے خوردنی تیل کی قیمتیں آسمان پر ہیں اور اگر جنگ کی وجہ سے سپلائی بند ہوئی تو ممکن ہے اس کی قیمتوں میں آگ لگ جائے۔ اس کے علاوہ روس بھارت کو کھانا کھلاتا ہے اور جنگی حالات میں اس کی درآمدات میں بھی رکاوٹ پڑ سکتی ہے۔ اگر ملک میں پہلے ہی یوریا کا بحران ہے تو حالات مزید خراب ہوں گے، اس مسئلے کا براہ راست اثر کسانوں پر پڑے گا۔ملک میں خوردہ افراط زر پہلے ہی بلند سطح پر ہے۔ ایسے میں خام تیل کی قیمتوں میں اضافہ اس میں مزید اضافہ کرنے والا ثابت ہوگا۔ مرکزی وزیر خزانہ نرملا سیتا رمن نے بھی حال ہی میں کہا ہے کہ خام تیل کی قیمتوں میں اضافہ ایک بڑا چیلنج ہونے والا ہے۔ درحقیقت اگر خام تیل مہنگا ہوا تو ملک میں پیٹرول، ڈیزل اور گیس پر پڑنے والا ہے۔ پٹرول اور ڈیزل کی قیمتوں میں اضافے سے مال برداری پر اخراجات بڑھیں گے اور سبزیوں اور پھلوں سمیت روزمرہ کی اشیاء مہنگی ہو جائیں گی۔کرنٹ نیوز آف انڈیاکے مطابق روس یوکرین جنگ ہندوستان میں مہنگائی میں اضافہ کرے گی: روس اور یوکرین کے درمیان جنگ کا اثر پہلے دن سے نظر آرہا ہے۔ جیسے ہی روسی صدر نے یوکرین میں فوجی کارروائی کا اعلان کیا۔ بھارت سمیت دنیا بھر کی سٹاک مارکیٹیں بری طرح ٹوٹ گئیں۔ سونے کی قیمت میں اچانک اضافہ ہوا اور خام تیل کی قیمت 100 ڈالر سے تجاوز کر گئی۔ ایسے میں اگر جنگ بڑھی تو بھارت پہلے ہی مہنگائی کا شکار ہے اور مہنگائی کو ایک اور دھچکا لگنا ہے۔روس اور یوکرین کے درمیان جاری جنگ کی وجہ سے دنیا بھر کی مارکیٹیں پہلے ہی ہنگامہ خیز تھیں لیکن جمعرات کو روسی حملے کے بعد وہاں کھلبلی مچ گئی۔ اسٹاک مارکیٹ گر گئی اور خام تیل کی قیمتیں آسمان کو چھونے لگیں۔ روس یوکرین بھلے ہی ہندوستان سے ہزاروں میل دور ہوں لیکن دونوں ملکوں کے درمیان ہونے والی اس جنگ کا براہ راست اثر ہندوستانیوں کی جیبوں پر پڑے گا۔ یعنی مہنگائی کی مار کے لیے اہل وطن کو تیار رہنا ہو گا۔روسی فوجیوں نے جمعرات کو یوکرین میں فوجی کارروائی کا آغاز روسی صدر ولادیمیر پوٹن کے اعلان کے بعد کیا۔ حملے کے پہلے ہی روز عالمی منڈیوں کے ساتھ ساتھ بھارتی اسٹاک مارکیٹ بھی گر گئی، سونے کی قیمت 51 ہزار سے تجاوز کر جائے گی اور خام تیل 104 ڈالر فی بیرل پر آکر آٹھ سال کا ہندسہ عبور کر گیا۔ اسی دوران ڈالر کے مقابلے روپے میں 102 پیسے کی زبردست گراوٹ دیکھنے میں آئی۔ سرمایہ کاروں کو اس جنگ کا اتنا خوف تھا کہ زبردست فروخت کی وجہ سے سینسیکس نے اس سال کی سب سے بڑی گراوٹ اور تاریخ کی چوتھی سب سے بڑی گراوٹ دیکھی۔ بی ایس ای کا یہ 30 حصص والا انڈیکس 2702 پوائنٹس کھو گیا، ساتھ ہی نفٹی میں بھی 815 پوائنٹس کی زبردست گراوٹ ہوئی۔ اس کی وجہ سے سرمایہ کاروں کو ایک ہی دن میں 13.5 لاکھ کروڑ روپے کا نقصان ہوا۔ ساتھ ہی یوکرین کے ساتھ جنگ کا روسی ارب پتیوں پر بھی برا اثر پڑا۔ روسی ارب پتیوں کو ایک ہی دن میں تین لاکھ کروڑ روپے کا نقصان اٹھانا پڑا۔روپے کی کمزوری کا اثر پڑے گا۔قابل ذکر بات یہ ہے کہ ہندوستان ضروری الیکٹرک سامان اور مشینری کے ساتھ موبائل لیپ ٹاپ سمیت گیجٹس کے لیے دوسرے ممالک سے درآمدات پر منحصر ہے۔ زیادہ تر موبائل اور گیجٹس چین اور دیگر مشرقی ایشیائی شہروں سے درآمد کیے جاتے ہیں اور زیادہ تر کاروبار ڈالر میں ہوتا ہے۔ اگر جنگ کے دوران روپے کی قدر اسی طرح گرتی رہی تو ملک میں درآمدات مہنگی ہو جائیں گی۔ بیرون ملک سے درآمدات کی وجہ سے ان کی قیمتوں میں اضافہ یقینی ہے جس کا مطلب ہے کہ موبائل اور دیگر گیجٹس پر مہنگائی بڑھے گی اور آپ کو زیادہ خرچ کرنا پڑے گا۔ ساتھ ہی آپ کو بتاتے چلیں کہ ہندوستان اپنا 80 فیصد خام تیل بیرون ملک سے خریدتا ہے۔ اس کی ادائیگی بھی ڈالر میں ہوتی ہے اور ڈالر مہنگا ہونے کی وجہ سے روپیہ زیادہ مہنگا ہو گا۔ اس کی وجہ سے مال برداری مہنگی ہو جائے گی، اس کے اثر سے ضرورت کی ہر چیز پر مہنگائی مزید مارے گی۔روس یوکرین کے ساتھ ہندوستان کی تجارت،یوکرین اور روس کے ساتھ ہندوستان کی تجارت اچھی سطح پر ہے۔ ایسے میں اگر دونوں ممالک کے درمیان جاری جنگ طول پکڑتی ہے تو ہندوستان میں اس کے اثرات کچھ اہم چیزوں پر مہنگائی کی صورت میں دیکھے جا سکتے ہیں۔ آپ کو بتاتے چلیں کہ ہندوستان یوکرین سے خوردنی تیل سے لے کر کھاد اور نیوکلیئر ری ایکٹر جیسی چیزیں خریدتا ہے۔ جنگ ہوئی تو دونوں ملکوں کے درمیان تجارت نہیں ہو گی اور بھارت کے لیے مشکلات بڑھ جائیں گی۔ ماہرین کا کہنا ہے کہ جنگ کی صورت میں بھارت کو برآمدات میں کمی کا سامنا کرنا پڑے گا جب کہ بھارت یوکرین سے جو چیزیں خریدے گا اسے پابندیاں لگنے سے مہنگائی کا شکار ہونا پڑے گا۔ انہوں نے کہا کہ خام تیل کی قیمتوں میں اضافے سے درآمدات کی لاگت بڑھے گی اور ملکی سطح پر مہنگائی کا دباؤ بڑھنے کا خطرہ بڑھ جائے گا۔خوردنی تیل اور کھاد کی قیمتیں بڑھیں گی۔اگر دو ملکوں کے درمیان جنگ ہوتی ہے تو اس کا پوری دنیا کی معیشتوں پر بڑا اثر پڑتا ہے اور پہلے ہی مہنگائی سے پریشان ہندوستان کے لیے یہ ایک دوہری مار سے کم نہیں ہو گا۔ آپ کو بتاتے چلیں کہ ملک یوکرین سے خوردنی تیل کی بڑی مقدار درآمد کرتا ہے۔ جی ہاں، یوکرین سورج مکھی کے تیل کا سب سے بڑا پیدا کرنے والا ملک ہے۔ بھارت کی بات کریں تو کچھ عرصے سے خوردنی تیل کی قیمتیں آسمان پر ہیں اور اگر جنگ کی وجہ سے سپلائی بند ہوئی تو ممکن ہے اس کی قیمتوں میں آگ لگ جائے۔ اس کے علاوہ روس بھارت کو کھانا کھلاتا ہے اور جنگی حالات میں اس کی درآمدات میں بھی رکاوٹ پڑ سکتی ہے۔ اگر ملک میں پہلے ہی یوریا کا بحران ہے تو حالات مزید خراب ہوں گے، اس مسئلے کا براہ راست اثر کسانوں پر پڑے گا۔آٹوموبائل سیکٹر متاثر ہوگا۔آپ کو بتاتے چلیں کہ ملک کے آٹوموبائل سیکٹر کو سیمی کنڈکٹرز کی کمی کا سامنا ہے۔ ایسے میں روس اور یوکرین کے درمیان جاری جنگ کا اس خطے پر اثر ہونا یقینی ہے۔ درحقیقت، یوکرین آٹوموبائل سیکٹر کو متاثر کرنے والا ہو گا۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ یوکرین پیلیڈیم اور نیون پیدا کرتا ہے، جو ایک خاص سیمی کنڈکٹر دھات ہے۔ سنکنرن کی صورت میں ان دھاتوں کی پیداوار متاثر ہوگی اور سیمی کنڈکٹر کی کمی کا یہ بحران مزید بڑھ جائے گا۔خوردہ مہنگائی مزید بڑھے گی۔غور طلب ہے کہ ملک میں خوردہ افراط زر پہلے ہی بلند سطح پر ہے۔ ایسے میں خام تیل کی قیمتوں میں اضافہ اس میں مزید اضافہ کرنے والا ثابت ہوگا۔ مرکزی وزیر خزانہ نرملا سیتا رمن نے بھی حال ہی میں کہا ہے کہ خام تیل کی قیمتوں میں اضافہ ایک بڑا چیلنج ہونے والا ہے۔ درحقیقت اگر خام تیل مہنگا ہوا تو ملک میں پیٹرول، ڈیزل اور گیس پر پڑنے والا ہے۔ پٹرول اور ڈیزل کی قیمتوں میں اضافے سے مال برداری پر اخراجات بڑھیں گے اور سبزیوں اور پھلوں سمیت روزمرہ کی اشیاء مہنگی ہو جائیں گی۔

متعلقہ خبریں

سرینگر /22مئی / این این این
انتظامیہ کی جانب سے رہبر جنگلات، رہبر زراعت، اور رہبر کھیل کے تحت ہوئیں تعیناتیوں.

سرینگر /22مئی / این این این بارشوں کے بعد جموں کشمیر کے کئی علاقوں میں شبانہ درجہ حرارت معمول سے کچھ نیچے درج کیا گیا.

کیمپ میں سینکڑوں مریضوں کا طبی معائنہ کیا گیا اور مفت ادویات بھی تقسیم کی گئیں پلوامہ/ تنہا ایاز/ جنوبی ضلع پلوامہ.

سرینگر /21مئی // این این این سرینگر جموں شاہراہ پر خونی نالے کے قریب زیر تعمیر ٹنل مہند م ہونے کے بعد لاپتہ مزدوروں.

صدرِ نیشنل کانفرنس ڈاکٹر فاروق عبداللہ (رکن پارلیمان) نے آج نٹی محلہ میر بحری کلان رینہ واری (ڈل) جاکر وہاں گذشتہ.